خیال کو جسم مِلا

image

خواب میں دیکھا تھا اُسے ایک دن میں نے

مگر آج وہ میرے در پہ دستک دیتا رہا

بُہت روکا سُرخ آندھی کی گرد نہ لگے دامن کو

مگر زرّہ زرّہ خاک میں میرے مِلتا رہا

راہ سے منزِل کا سفر طے کر تو لِیا میں نے

مگر کا نٹا بن کے میرے پَیر میں چُبھتا ر ہا

ایک مِیٹھے زِہر کی طرح ا ثر کر ر ہا ہے خُون میں

مگر خنجر بن کے میرے سِینے میں کھُبتا رہا

خیال جو حقیقت ہو نے کا سبب بن گیا

مگر رُوح بن کے میرے جِسم میں پَلتا دہا

One thought on “خیال کو جسم مِلا

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s