تب سب اچھا تھا

image

 

عرُوج پہ جنُون تھا تو تب سب اچھا تھا

وقت جب آوارہ تھا تو تب سب اچھا تھا

ادھُورے پِہر کی آغوش میں جو کھیلا تھا

اُس مات کا نظارہ تب اچھا تھا

کسک سے نہ آشنائ تھی اُسے جو

سنجیدہ تھا اِک دَور تب سب اچھا تھا

پرستِش کے قابِل تو تھا وہ مُجسّمہ

کا فِرانہ انداز تھا اِنسان تب وہ اچھا تھا

آتِش سے کون سُلگاۓ موم کی گرمی کو

پِگھلتی شمعٰ کا پروانہ تب وہ اچھا تھا

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s