کشمکش

image

میری ذات سے لِپٹی ہیں یوُں جالوں کی قطاریں

ریشم بُنتی بھی نہیں گِرہَ کھولتی بھی نہیں

خُوش فہمی کی عِما رت یوں تعمِیرِ عمل  ہے

سچ سُنتی بھی نہیں جُھوٹ چھُپاتی بھی نہیں

شرم و حیا  سے آراستہ یوں  زیورِ ہستی  ہے

نظر اُٹھا تی بھی نہیں پَلک جُھکا تی بھی نہیں

سِراجِ اُلفت میں  پیوست ہے یوں لَؤِ شمعٰ

اِرادہ کرتی بھی نہیں پِیچھے ہٹتی بھی نہیں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s