شَربتی آنکھیں

image

جب وہ پلکیں اُٹھاۓ

تو اُس کی آنکھوں کے

گُلابی ڈورے روشن

کرتے ہیں اُجالے جِن سے

آفاق اور وسیع

سویرے دِلنشیں اور

نظر آتے ہیں

 

اور سمُندر کے

سنہرے شِیشوں

میں اپنا ہی عکس

دیکھ کے میں

دِل ہی دِل میں

مُسکرا لیتی ہوُں

 

ساحر نِگاہوں

کا پیام لے کے

اُس قاتِل انداذ سے

جِن کی خُماری میں

چھَلکتے میکدے اور بھی

نشیِلے ہو جاتے ہیں

اور میں جُھولنے لگتی ہوُں

بے اِختیار اِن میں اور

 

ایک ہی بات کِہتی ہیں

تب میری آنکھیں

کہ میرے دِل و جان عاشِق

اِن شربتی آنکھوں پَر

 

One thought on “شَربتی آنکھیں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s