کب تَک؟

image

آنسوُ چُھپائیں کب تک نِیندیں گنوائیں کب تک

کِرن تو دستک دے چُکی سوگ منائیں کب تک

قِسمت کی آڑ میں چُھپی بربادی نظر آئ تو

دامن میں آگ بُجھانے کے ڈر کو چُھپائیں کب تک

تیرے ساۓ نے در کھولے ہیں موت کے چاروں اَور

ذِندگی کے پیچھے بھاگتےخود کو رُلائیں کب تک

میری بے بسی نے ہاتھ پَکڑا ہے میرا کُچھ اِس طرح

تیری کسک کی خوشبُو سے پِیچھا چھُڑائیں کب تک

رات کی سیاہی پہ کہکشاں کا رقص دیکھا تو ہے

ادھُورے چاند کی تنہائ کے داغ کو ٹُھکرائیں کب تک

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s