مُحبّت نامہ

image

دیکھتی ہُوں ! اِک مچلتی لِہر

دوڑتی آرہی ہے دُور تلک

سما جانے کو لُٹ جانے کو

اپنے معشُوق کی باہوں میں

اُس کی شِدّت میں پوشیدہ

طوفان ہے اور جنون سی تیزی بھی

سرسراتی جِھلملاتی موجیں

اُبھرتے جذبات لیۓ ایک نۓ

کھیل کو جگا رہی ہیں

یہ تیرا ذِکر ہے شاید جو

موجیں مستانی ہُوئی جاتی ہیں

اُف! تیری بے مِثال داستانیں

یہاں بھی گھیرے ہیں مجھے ہر دم

خُود سے مُحبّت کرنے لگی ہوں میں بھی

کیونکہ تیرا وجُود اب شامل ہے

مُجھ میں اِن موجوں کی طرح جو

گواہ ہیں میرے قتل کی

تیرے پیغام لے کے آتی ہیں

شاید یہ لِہریں ، کیا کہنے

کیا تُجھ تک کوئی مُحبّت نامہ

پُہنچا ہے ابھی تک ؟

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s