سوغاتِ ذندگی

image

یہ رات کیوں ہوتی ہے؟        یہ شام کیوں ڈھلتی ہے؟

یہ دن کیوں نِکلتا ہے؟           یہ فِضا کیوں چلتی ہے؟

یہ رنگِ عشقِ کائنات ہیں ، اِن میں کھو جائیں

یہ پرِندے کیوں چِہچہاتے ہیں؟      یہ بادل کیوں گڑگڑاتے ہیں ؟

یہ آندھیاں کیوں مچلتی ہیں؟     یہ بِجلیاں کیوں چمکتی ہیں؟

یہ حُسنِ عشقِ کائنات ہیں ، اِن میں سِمٹ جائیں

یہ نظر کیوں بِہکتی ہے؟        یہ سانس کیوں اُکھڑتی ہے؟

یہ دل کیوں دھڑکتے ہیں؟         یہ جذبات کیوں تڑپتے ہیں؟

یہ صباحتِ عشقِ کائنات ہیں ، اِن میں نِکھر جائیں

یہ پُھول کیوں کِھلتے ہیں؟        یہ رنگ کیوں بِکھرتے ہیں؟

یہ آگ کیوں جلتی ہے؟            یہ پیاس کیوں بڑھتی ہے؟

یہ مُعجزۂِ عشقِ کائنات ہیں،  اِن میں سنور جائیں

یہ چاند کیوں چمکتا ہے؟        یہ سمندر کیوں ڈُوبتا ہے؟

یہ جھرنے کیوں بِہتے ہیں؟         یہ شَمس کیوں نِکلتا ہے؟

یہ فِردوسِ عشقِ کائنات ہیں ، اِن میں اُتر جائیں

یہ جسم کیوں پگھلتا ہے؟           یہ ساز کیوں بَجتا ہے؟

یہ رُوح کیوں کھِچتی ہے؟           یہ خواب کیوں بُنتی ہے؟

یہ معرفتِ عشقِ کائنات ہیں،  اِن میں مِٹ جائیں

یہ اُنس کیوں ہو جاتا ہے؟         یہ آنکھ کیوں ٹکراتی ہے؟

یہ زُلف کیوں لِہراتی ہے؟          یہ آہٹ کیوں چونکاتی ہے؟

یہ دولتِ عشقِ کائنات ہیں ، اِن میں چُھپ جائیں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s