کٹے ہوُۓ پَر

image

اِن خوابوں کے جھمیلوں میں

جب سَچ کی دُھول اُترتی ہے

اور تلخ کڑوی پیاس کوئی جب

گھُونٹ بن کر اَٹکتی ہے تب

حقیقت کے سفید ورقوں پہ

سیاہی کا رنگ جب چڑھتا ہے

پھر چند جھُوٹے کِردار اور نقلی

افسانے پروان چڑھتے ہیں

اور اِن بے جان رُوحوں میں

جَگتی ہیں بناوٹی جِسموں کی

راکھ اور پِھر ہاتھوں کی لکیریں

…..مدھم نظر آنے لگتی ہیں

سُہانے پَلوں سے لِپٹے شاخ

کے جھُولتے سبز پتّے اور

اُن کے رس کو پیتے ہُوۓ

زرّہ زرّہ جب بھرنے لگے

نسوں میں زہر کا نشہ

تب دُور کہیں ایک فاختہ

اپنے پَر کٹنے کا جشن منا رہی ہوتی

ہے جِس کی اُڑان اِک حسرت

میں قید اُس آندھی کی شِدّت

اُڑا لے جاتی ہےاور تب

اُس کے آدھے مظبُوط اور

پُورے اِرادے جب ٹُوٹتے نظر

آئیں تب اُسے اپنی تقدیر

…..مدھم نظر آنے لگتی ہے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s