خُماری

image

گِرفت میں ہے مۓِ آتِش کہ چھَلک نہ جاۓ کہِیں

پِیتے پیتے ایک مُدّت  ہی نہ گُزر جاۓ  کہِیں

بھرے پیمانوں میں تیرتی ہیں پنکھڑیاں کنول کی

ڈُوبتے ڈُوبتے ایک مُدّت ہی نہ گُزر جاۓ کہِیں

غُنچۂِ دل ہے شگُفتگی کے طلِسمات سے مَخموُر

مُسکراتے مُسکرات ایک مُدّت ہی نہ گُزر جاۓ کہِیں

صندل بنے اُس وجُود کی رحمت سے پیراہنِ جاناں

مِہکتے مِہکتے ایک مُدّت ہی نہ گُزر جاۓ کہِیں

آغوشِ صنم میں بِکھر رہے ہیں کِنارۂِ جسم و جاں

سِمٹتے سِمٹتے ایک مُدّت ہی نہ گُزر جاۓ کہِیں

 

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s