شَبنمی موم

image

رُوح کِھچتی چلی گئی اُن لبوں میں ریزہ ریزہ ہو کر

اِس شباب و اُلفت کے کھیل میں عکس چُھپ سا گیا ہے

عالمِ اِنتہا میں ٹُوٹے شِدّتِ وصل تڑپ کے باہوں میں

اِس کسک و جلن کے کھیل میں وجُود بِہک سا گیا ہے

کِتنی بے چین تھی اُن ہاتھوں کی نرماہٹ میں یہ کلیاں

اِس وجد و تِشنگی کے کھیل میں ساغر چھَلک سا گیا ہے

شمعٰ کی کروٹوں میں آندھیوں کے شور کی ہلچل تھی

اِس موم و شبنم کے کھیل میں جسم پِگھل سا گیا ہے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s