….مَن چاہی

 

image
Enter a caption

دِل چاہے کہ روز

نئی کونپلوں کو

خُود میں بَنتے دیکھوں

پھر اِن کے جوبن سے

آراستہ ہوں حُسن

اور کِھلے گُلشن جب

اِس بدن کی سُرخ

شام میں جگیں سُرمئی

خواب جن میں

….سرُور کے سِوا کُچھ نہ ہو

دل چاہے کہ اُس ذُلف

کی سیاہ رات سے

اِس رُخ پہ اندھیرے

جگمگائیں اور وہ چُنے

تب اِن ہیِروں کی چمک

سے چَند نرمگیں پل

جن میں بِہہ کے ساحِل

کو بھُول جائیں اور پائیں

ایسی منزلیں جن میں

….روشنی کے سِوا کُچھ نہ ہو

دل چاہے کہ سرد شُعلہ

ہلکے ہلکے بُجھے اور

اِس ٹھنڈک سے پیر جلیں

تب بِچھنے لگُوں اُن قدموں

کی خوبصورت آغوش میں

اورنس نس میں دوڑتی

آگ اِس تاثیر کو ایسے

سُلگاۓ جِس میں

….بے خُودی کے سِوا کُچھ نہ ہو

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s