بازی

image

کورے نینوں میں جب جھانکوُں ٹُوٹے تار ہی دیکھوں

کبھی جُنبشِ سوز کہیں بےسُر و ساز دیکھُوں

فراموش شام کے بِسرے سایوں میں خُود کو کھوجُوں

بے رَبط قافلو ں میں چُھپے دِلکش مناظر دیکھوُں

بیابانِ دشت کے بُجھتے دِیوں  سے ذات جلاؤں

سرگرم کوششِ رسائی کی آڑ میں مات دیکھوُں

بازئِ زندگی کے فریبی رُخسار پہ مُہرے بِچھاؤں

مُقابلۂِ شطرنج کے انجام میں خوُدی کو لُٹتا دیکھوں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s