!کیا کیِجیۓ

image

مُجھ سے شناساں ہے وہ قاتل دھڑکن

آشنائی کی حد گرَ شکست دے تو کیا کیجیۓ

اندھیرا خُوب چمکتا ہے اُس کے آنگن میں

روشن میری گلیاں گرَ ہوں تو کیا کیجیۓ

چاند سجدے کرتا ہے اُس کے قدموں میں

عبادت میں گرَاُس کا نام لُوں تو کیا کیجیۓ

دھنک اُدھار لیتی ہے اُس سے نۓ رنگ

اُس کے رُوپ میں گرَ نہا لُوں تو کیا کیجیۓ

شام اُن نظروں کی تاب سےحسن و جوان ہے

اِس جوبن پہ گرَ وہ اپناکرم کر دےتو کیا کیجیۓ

اُس کے وجُود میں چمک ہے بے پناہ ہیِرے سی

تراش لے گرَ وہ موم سے یہ جسم تو کیا کیجیۓ

One thought on “!کیا کیِجیۓ

Leave a Reply to Umar Cancel reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s