پیاس

image

وہ سمندرکہاں سے لاؤُں جو پیاس بُجھاۓ

وہ کُنواں کہاں سےلاؤُں جو پیاس بُجھاۓ

جس عادت میں بَندھ چُکی ہیں سانسیں

وہ رُوح کہاں سے لاؤُں جو پیاس بُجھاۓ

جس قُربت نے چَکھ لیا ہے نمکین زہر

وہ زائِقہ کہاں سے لاؤُں جو پیاس بُجھاۓ

جس تَسکین میں راحت مِلے عُمر بھر کی

وہ لمحہ کہاں سے لاؤُں جو پیاس بُجھاۓ

جس لَمس کی حِدّت میں کانپ اُٹھتا ہے بدن

وہ شِدّت کہاں سے لاؤُں جو پیاس بُجھاۓ

جس آگ کی گرمی میں شمعٰ جل رہی ہے

وہ پروانہ کہاں سے لاؤُں جو پیاس بُجھاۓ

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s