سُرخ شرم

image

یہ تھکَن ہے یہ عِلامت

ہے اُن پَلوں کی جو گُزارے

ہیں قُربت کی دلفریب پناہوں

میں کہ درد جب چُور ہو اور

گواہ دینے لگیں جان وتن تب

احساس کے بِچھونے سے عیاں

ہوتے ہیں راز جن کی کشش

سے بِستر کی گرم سِلوٹوں

کے نِشاں حیا کی سیڑی

کبھی چڑھتےکبھی اُترتےہیں

…پلکوں کی چِلمنوں میں

ادھوُرے مراسم کی بے چین

اُمیدوں پہ جب جنون کی

پیاس چمکنے لگے تو چُبھتے

نرمگیِن لمس احساس کے

بادلوں سے برس جاتے ہیں

تب نَس نَس میں بھرتی آگ

وجُود میں ہلچل مچا دیتی

ہے پھر جلتے بُجھتے چراغ

چُھپنے لگتے ہیں

…پلکوں کی چِلمنوں میں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s