مُستحِیل

image

مکَمّل ہوتے ہی رنگِ تصویر چُھپنے لگے ہیں کناروں میں

سُرخ گُلاب  کبھی زرد تو کبھی صفا ہُوۓ جاتے ہیں

محفلِ رنگ سجائی ہےکاغذ کےپھُولوں سےکہ برقرار رہے

مہکتے گُلشن  کبھی دشت تو کبھی صحرا ہُوۓ جاتے ہیں

بےجان بُت تراش کر پچھتاوےکی ڈور سے بندھ گئی زندگی

سنگ تراش کبھی  بشَر تو  کبھی خُدا ہُوۓ جاتے ہیں

عجب حُسن و شباب کی پھیکی رونقوں سےلُبھاتےہیں ذات کو

تماشائی کبھی زہر تو کبھی دوا ہُوۓ جاتے ہیں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s