پرَستِش

image

شام ہوتے ہی پھُول اُسے چُومتے ہیں

رات ڈھلتے چاندنی اُسے نہلاتی ہے

ستارے اُس کے آنچل میں سِمٹ آتے ہیں

آفتاب اُس کے بدن سے کِرنیں سیکتا ہے

…..کیونکہ گُلبدن اُسے کہتے ہیں

سویرا اُسے شبنمی تاج پہناتا ہے

ہوائیں اُس سے خوُشبو اُدھار لیتی ہیں

نرم چھاؤں اُس کی ذلفوں کو سہلاتی ہے

اُس کی آنکھوں میں مے رس گھولتی ہے

….کیونکہ مہجبیِن اُسے کہتے ہیں

بارش اُس کے عشق میں بےاختیار برستی ہے

اُس کی پایل سے سرگم بجنے لگتے ہیں

چوُڑیاں رقص کرتی ہیں اُس کی کلائی پہ

اُس کی مُسکراہٹ میں دھنک کے رنگ شامل ہیں

…..کیونکہ بہار اُسے کہتے ہیں

گجرے کی کلیاں مہکاتی ہیں وجُود اُس کا

سمندر اُس کی گہرائی میں ڈُوب جاتا ہے

اُس کے ہونٹ آبِ حیات کا پیالہ ہیں

مہندی اُس کی ہتھیلی پہ رنگ سجاتی ہے

….کیونکہ گُلزار اُسے کہتے ہیں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s