سوال

image

کیا اِن باہوں سے دُور رہ سکو گے؟

کیا اِن پناہوں سے دُور رِہ سکو گے؟

جن سانسوں میں کروٹ لیتے تھے

اُن خوابوں سے دُور رِہ سکو گے ؟

سِتاروں کی محفل جو سجائی تھی

اُن شاموں سے دُور رِہ سکو گے؟

پیاسی آنکھیں بُلاتی ہیں تُمہیں

اِن اُجالوں سے دُور رِہ سکو گے؟

جن شعروں میں جُستجو ہو تُمہاری

اُن افسانوں سے دُور رِہ سکو گے؟

ختم نہ ہو کبھی لگن یہ میری

اِن انتہاؤں سے دُور رِہ سکو گے ؟

آئینے میں چہرہ جو دیکھتے تھے

اُن سرابوں سے دُور رِہ سکو گے ؟

خود کو کھو چُکے ہو جس دل میں

اُن دھڑکنوں سے دُور رِہ سکو گے؟

2 thoughts on “سوال

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s