اِطمینان

image

زندگی کے راستےکٹھِن ہوں اگر

ہَمسفر ہو تُم بس یہی کافی ہے

کنارۂِ دل چھلنی  ہو جاۓاگر

ہَم نَفس ہو تُم بس یہی کافی ہے

رنج و غم گر محبوب ہونے لگیں

ہَم پہلُو ہو تُم بس یہی کافی ہے

چھلَکنے لگیں آنسو تو کیا ملال

ہَمدرد ہو تُم بس یہی کافی ہے

دِلکش نہ سہی نغمہ و شعر اکثر

ہَم سُخن ہو تُم بس یہی کافی ہے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s