…ایک بار پِھر سے

image

تیرے ساۓ سےکوئی مراسِم نہیں اب تو

پِھر سے یہ رشتہ بنا لوُں تو کیا ہو

میرے خیال ریزہ اور خواب حیات ہیں

گر نیند سے ہی نہ جاگوں تو کیا ہو

زندگی میں مقام آ رہا ہے پھر سےشاید

خوُد سے گر میں جی لگا لوُں تو کیا ہو

خزاں سے جو کسک اُدھار دی تھی تُم نے

اُسی راستے کو منزل بنا لوُں تو کیا ہو

میرے شب و روز پہ طاری ہے ہر دم وہ

اِس قید سے گر جاں چھُڑا لوُں تو کیا ہو

اِس میں سزا ہے اُس کی رضا کے ساتھ

فقط خُدا سے عشق لگا لوُں تو کیا ہو

پگھلتی جا ہی ہے شمعٰ آہستہ آہستہ

اِس تپش سے رُوح جلا لوُں تو کیا ہو

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s