اِعتقاد

image

سمیٹ کر درد باہوں میں خوشیاں بکھیرتی ہوں

دل کے آسمان پہ چاہتوں کے پھُول سجاتی ہوں

بے چین لمحوں کی دھُوپ چھاؤں در گُزر کرتےہُوۓ

مُسکراہٹوں کےچمکیلےآنچل میں ستارے لپیٹتی ہوُں

تپتی ریت کی جلن سے خود کو بچاتے چل نِکلوں

مِہکتی برسات کے موتیوں سے جسم بھگوتی ہوں

رنج و غم سے جب چھلنی ہونے لگتی ہیں سانسیں

روح کے مخملی جھرونکوں میں مُحبّت سمیٹتی ہُوں

پِگھل کر جب شمعٰ نہانے لگتی ہے آنسوُؤں میں

حِدّتِ چنگاری کے جواں جوبن سے ذات سُلگاتی ہوُں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s