آزُردہ خاطِر

image

آج پھر اُسی مقام پر رُکنا پڑا جہاں سے تھی چلی

آگے کُہرے ہیں جہاں دیکھوں پیچھے دشت کی تِیرگی

خس و خاک کے ڈھیر تلے بے جان رُوحوں کی صدائیں ہیں

سامنے موت ہے مُنتظر باہیں پھیلاۓ تو پیچھےکفنِ زندگی

فِہرستِ دُشمناں میں ہمدم ہیں بے شُمار جہاں دیکھوں

یاں سازِشوں کے پھَندے ہیں واں دامِ تزویر کی سیاہی

تنِ بے ضمیر میں مَکفُوف مَیّت کو نہیں سہارے کی آرزو

اندر گُھٹن جکڑے ہے نفس کو باہر سِسکتی ہے خامِشی

زہرِ عشق کے کڑوےگھُونٹ نس نس میں اُترتے جاتے ہیں

آگے نرمئِ آغوشِ پیکرِ جاناں پیچھےفیصلِ تقدیر کی ناگُزیری

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s