خُود رَفتگی

image

شِدّتِ جنون ہو دھُوپ میں اگر تو آفتاب خُود غرض کیسے

وہ بے خبر نہ جانے ہے اُس کی ذات سے کتنے تن جل گۓ

بے مثال حُسن و شباب جگا بھی دیں احساسِ بےخُودی اگر

اِس لا عِلمی کی غَفلت میں نہ جانے کتنے دل فنا ہُوۓ

قیدِ آشنائی کے خنجر سے بھلا کوئی بچ سکا ہے آج تک

اِس خُود کُشی کی چاہ میں نہ جانے کتنے بے موت مارے گۓ

دِلفریب سبھی نظر آتے ہیں داغ نُمایاں بھی اور پوشیدہ بھی

اِس سوغاتِ بےاختیاری میں نہ جانے کتنےمرہم ضائع ہُوۓ

قطرہ قطرہ ٹَپکتا ہےلہؤِ جگر گرچہ طلب بڑھتی جاۓ ہے

اِس پاگل پن کی حد میں نہ جانے کتنے ارمان پیاسےلُٹے

قندیل میں چھُپی شمعٰ کو پگھلنے کی اِجازت بھی نہیں

اِس سُنہری پناہ گاہ میں نہ جانےکتنے پروانوں کے وِرد ٹُوٹے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s