خوابِیدہ پَل

image

تھک کے جب وہ سوتا ہوگا

اور نیند کے دروازے اُن جھروکوں

میں کُھلتے ہونگے تب ایک سراب

جلتی شمعٰ لیۓ خوابِیدہ آنکھوں

…کی طرف بڑھتا جاۓ گا

جلتی مشعٰل لیۓ اپنے پیراہن

میں لپیٹے جس حدّت سے اُن

دھڑکنوں کے در پہ دستک ہوگی

تب گرم لبوں پہ مدھم سی

…ہنسی بِکھرتی جاۓ گی

اُن آرام پَلوں میں ٹَٹولتی بےچین

سانسیں سرُور کے میٹھے پیالوں

کا رس پینے لگیں گی تب کہِیں

مچلتی چِنگاریاں رُوح کو ہلکا سا

…بِھگوتی نظر آئِیں گی

فِردوس اُس پیکرِ عشق کی آرزو

میں اپنے جوبن سےجب اُن کناروں

کو درخشاں کرے گی تب شجر کی

ڈالیاں اُسے پھُولوں سے نہلائیں گی پھر

اُس راہ سے اِس منزل کا سفر پل بھر

…میں پار ہوتا جاۓ گا

اُن بےخبر نینوں میں چُھپی حسرتوں

کے کِھلتے چمن اُس کے بدن کو گُدگُدانے

لگیں گے تب اِس چاؤ کی لگن

اُسے آہستہ آہستہ نیند سے بیدار

…کرتی جاۓ گی

اور وہ واپس حقیقت میں لَوٹ آۓ گا

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s