قدر شناسی

image

صنم کے چھُوتے ہی ہر نعمتِ قُدرت بنتی ہے پسند کے قابل

میں دل اور پھُول دیوانے ہیں اُس فضا کے جہاں وہ سانس لیتا ہے

جس چمک کی قدر کرے دلدار میرا  اُس میں نِکھرنا چاہُوں

میں چاند اور پایل پرِستار ہیں اُس جہاں کے جسےوہ سنوارتاہے

بدلتے رنگِ موسم میں گُم ہوتے دیکھُوں وہ حسین چشم

میں دھنک اور آنچل عاشق ہیں اُس عرش کے جس میں وہ جگتا ہے

حُسنِ خیال کی رعنائی کے جُدا ہیں قیاس و انداز سبھی

میں خواب اور کاجَل قُربان ہیں اُس سراپا پہ جس میں وہ بستا ہے

شعر و نغمہ میں زندگی بھر دے میرےمحبُوب کا فسانۂِ دل

میں نشہ اور غزل فِدا ہیں اُس ترنّم پہ جسے وہ گُنگُناتا ہے

2 thoughts on “قدر شناسی

  1. بہت اعلی انداز ..جدت خیال اور ندرت بیان کا حسین سنگم
    اللہ کرے زور قلم ، اور زیادہ

    اس غزل کو پڑھ کر مجھے بے اختیار صوفی تبسم کی ایک مشہور غزل کے چند اشعار یاد آ گئے
    ” گر قبول افتد ، زہے عز و شرف ”
    ===

    افسونِ تمنا سے ،………… بیدار ہوئی آخر
    کچھ حسن میں بے باک کچھ عشق میں زیبائی

    وہ مست نگاہیں ہیں یا وجد میں رقصاں ہے
    تسنیم کی لہروں میں فردوس کی رعنائی

    آنکھوں نے سمیٹے ہیں نظروں میں ترے جلوے
    پھر بھی دلِ مضطر نے تسکین نہیں پائی

    سمٹی ہوئی آہوں میں ، جو آگ سلگتی تھی
    بہتے ہوئے اشکوں نے وہ آگ بھی بھڑکائی

    اک ناز بھرے دل میں یہ عشق کا ہنگامہ
    اک گوشہء خلوت میں یہ دشت پنہائی
    =

    (صوفی غلام مصطفیٰ تبسم )

    Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s