گوہر تَر

image

صنم کی آنکھ سے گِرتا ہے قطرہ قطرہ

چُن لیا ہے میں نے اِسے موتی سمجھ کر

کنارۂِ رُخسار پہ دَم توڑے انمول اَشک

چُوم لیا ہے میں نے اِسے پھُول سمجھ کر

سُرخ چراغ میں بِہتےدیکھا شرارۂِ تِشنگی

پِی لیا ہے میں نے اِسے شبنم سمجھ کر

سمندر کی روانی میں ڈُوبتا نایاب آنسُو

چَکھ لیا ہے میں نے اِسے مِے سمجھ کر

One thought on “گوہر تَر

  1. ایک دھیما انداز …ایک پرُسوز آواز ، کوئی چشم ِتر !
    یوں کہہ لیں جیسے برَبط ِسوز پر مِضرابِ الم ، دھیرے دھیرے ، کوئی ایسا گیت چھیڑ رہی ہے جس سے رگ و جان سلگ رہے ہیں.

    تراشیدم ، پرستیدم ، شکستم ( اقبال )

    Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s