دَستک

image

اُن دنوں اُمنگ پہ جب خُمار تھا

خِزاں کی اُڑتی چَڑھتی سُرخی کا

اور جھانکتی تھی بہار دریچوں

سے تب ہوا اُڑا لے جانا چاہتی تھی

…ارمانوں کو پَر تُم نہیں تھے

اَب جب مِلے ہو تو ارمانوں پہ

….بہار ہی بہار ہے

اُن دنوں جب پیاس چاہتی تھی

سمندر سے گھُونٹ پینا اور بُوند

بُوند کی مُحتاج تھی آس تب

احساس جَگتا تھا ڈُوبنے کا

…پَر تُم نہیں تھے

اَب جب ملے ہو تو پُورا سمندر

….میری آغوش میں ہے

اُن دنوں جب ہاتھ بڑھاۓ تھے

چھُونے کو بے باک کلیوں کے بدن

اور جھرتی رہِیں ہاتھوں سے سبھی

آرزوئیں تب ہونٹ چاہتے تھے چُومنا

….پنکھڑیوں کو پَر تُم نہیں تھے

اَب جب ملے ہو تو لبوں کے کھِلتے

…گُلاب صرف پیِنا جانتے ہیں

اُن دنوں جب نۓ راستوں پہ چلتے

پُرانے آنگن میں ڈھلتے چاند کے سرہانے

بیٹھی ہُوئی مدھم حرارت میں چنگاری

ڈھونڈ رہی تھی تب نظریں ترسی تھیں

…اُس روشنی کو پَر تُم نہیں تھے

اَب جب ملے ہو تو ہر شب چاند کی

…کِرنیں سجدے مُجھے کرتی ہیں

اُن دنوں جب شِدّت بدن میں کروٹ لیتی

تھی اور انگڑائی کی نئی جُستجُو جگاتی

تھی کئی خواہشیں تب سانسیں مِٹ جانے

…کو بے چین تھیں پَر تُم نہیں تھے

اَب جب ملے ہو تو دھڑکنوں پہ دستک

….روز کرتی ہیں تُمہاری سانسیں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s