روز نیا عالم

image

جب بھی مِلتے ہیں صنم ہر مُلاقات

بدل جاتی ہے اِک خوشبو میں جس

کے کنارروں کی پنکھڑیاں مہکانے

…لگتی ہیں بدن کی ڈالیِوں کو

جب بھی مِلتے ہیں جانم ہر مُلاقات

بدل جاتی ہے اِک کشش میں جس

کی ڈوریں بے اختیار کِھچتی چلی

جاتی ہیں اُن بُلندیوں پہ جہاں سے

…واپسی کا کوئی راستہ نہیں

جب بھی مِلتے ہیں پِیا ہر مُلاقات

بدل جاتی ہے اِک انداز میں جوجگاتی

ہے مدہوشی جس میں بے خود ہوتے

…ہی جان اور تن ڈُوبنے لگتے ہیں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s