زیرِلَب

image

اُڑتے دل کی دھڑکن نے

جب اِظہار کیا اُس تڑپ

کا جو جل رہی تھی

سانسوں میں کہ یہ آگ

میری ہے تب چُپکےسے اُس

نے کانوں میں یہ کہہ دیا

…کہ تُم میری ہو

ڈُوبتی نظروں میں پوشیدہ

رنگ جب سوال اُٹھانے لگے اُس

سویرے سے جس میں قُربت کی

گرم چھاؤں غرق ہوتی نظرآئی تب

خاموشی سے اُس نے جھانکتے

ہُوۓ آنکھوں میں یہ کہہ دیا

…کہ تُم میری ہو

زُلفوں کے تَپتے بادلوں میں کبھی

اُبھرتے کبھی چُھپتےچہرے

کی نرم شوخیاں اقرار کرتی

رہیِں اُن گُستاخ اداؤں کی جن

کے نقش رُوح میں پیوست پَلوں کے

غُلام بنےتب سرگوشی سےاُس نے

سمیٹتے ہُوۓسانسوں میں یہ کہہ دیا

…کہ تُم میری ہو

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s