خطاکار کون؟

image

آتش و جَل کی قُربت میں

فنا ہوتے موم و برف جب

انتہا کے دامن کو چھُونے

لگیں تو کیا خطاکار ہوں گے

شُعلے یا برستی پُھواریں؟

خاک و رُوح کے وجُود میں تباہ

ہوتے جسم و جاں جب اُڑنے لگیں

بُلند فضاؤں میں تو کیا گُنہگار

ہوں گی ہوائیں یا چُومتی گھٹائیں؟

قید و رہائی کی جنگ میں شکست

کھاتے پیاس وارمان جب توڑنے

لگیں زنجیروں کو تو کیا قصوروار

ہوں گی زُلفیں یا قاتل ادائیں؟

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s