تصدیِق

image

مُجھے چاہنے سے روکے گر تُمہیں کوئی

تو اپنے دل کی شِدّت سے پُوچھ لینا پِہلے

کوئی زہر اگر پیش کرے شربت سمجھ کر

تو احساس کے گھُونٹ سے پُوچھ لینا پِہلے

نہ کر سکو یقیں اُلفت کے پیچ و تاب پر

تو اپنے وجود کی سچّائی سے پُوچھ لینا پہِلے

میرے کَمسِن دل کی شریِر رُوح نہ بھاۓ اگر

تو آئینے میں جھلکتی نظر سے پُوچھ لینا پِہلے

نہ پرکھ سکو تب بھی شیِشے کااُجلا پن

تو اپنی آنکھ میں جلتی شمعٰ سے پُوچھ لینا پِہلے

ایمان کے مزار پہ گر پُھول مِلےمُرجھاۓ ہُوۓ

تو بارگاہ میں مدہوش قلندر سے پُوچھ لینا پِہلے

پشیمان جو کرنے لگے ضمیِر کا بدن تُمہیں

تو اپنے عشق کی عقیدت سے پُوچھ لینا پِہلے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s