سزاۓ تازِیانہ

image

کِس جُرم کی ہے یہ سزا پتا تو چلے

دل لگانا گر گُناہ ہے تو یہی سہی

صبر بھی ہے بے چینی کی قبر میں بَند

موت کو گلے لگانا ہے جب تو یہی سہی

سُنائی ہے قیدِ با مُشقّت میرے محبوب نے

ہنس کےزِندان میں جل جاناہےتو یہی سہی

نہ کوئی سوال میں کروُں نہ تُمہیں کوئی فکر

چُپکے سے زہر یہ پی جانا ہے تو یہی سہی

اَب نہ طلب کوئی کھٹکھٹاۓ گی تُمہارا دَر

خُود سے رُوٹھ جاناہےاگر تو یہی سہی

میں سو جاؤُں گی سیاہیِوں کے ملبوس تلے

کہکشاں کو گر منانا نہیں تو یہی سہی

ڈھال بنا کے جس مقصد سے توڑا ہے دل

اِس رُوح کو گر مار ڈالنا ہے تو یہی سہی

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s