تَشوِیش

image

بے زار ہے شِکن جس سِمت بھی چل نکلوُں

نہ جانےاِس راستےکی منزل ہے بھی کہ نہیں

بے صبر دل تباہ کرنے کو ہے ذات میری

نہ جانے اِس غم کی اِنتہا ہے بھی کہ نہیں

بکھر گۓ سبھی شیِشے میرے آئینے کے

نہ جانےاِس دراڑمیں جوڑ ہے بھی کہ نہیں

پچھتاوے کی ڈور سے بندھ گیا ہے ماضی

نہ جانےاِس تعلّق کی صُبح ہے بھی کہ نہیں

فریب کے پاؤں چلنے لگے ہیں سیدھی چال

نہ جانےاِس سازش میں مات ہے بھی کہ نہیں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s