اہمیّت

image

…بس اِتنا جاننا ضروری ہے

کیا آج بھی اُن خوابوں کی تعبیِر

میرے وجود کے تکیے سے آشنا ہوگی؟

کیا آج بھی وہ قاتل مُسکراہٹ

خیال میں میرے جھُومتی ہوگی؟

کیا آج بھی بھیگی فضائیں

اُس کی پلکوں پہ موتی بکھیرتی ہوں گی؟

کیا آج بھی اُس غزل کو سُن کر

اُس کی نشیلی کسک ٹُوٹتی ہوگی؟

کیا آج بھی وہ مہکتے گُلاب

اُسےمیری خوشبو کی یاد دِلاتے ہوں گے؟

کیا آج بھی میری پایل کی چھَنک

اُس کی حسرت میں برق لہراتی ہوگی؟

کیا آج بھی اُس کے لمحوں میں

شِدّت بے اختیاری کی چادراوڑھتی ہوگی؟

کیا آج بھی سِتاروں کے جھُرمٹ میں

وہ چمکیلی محفلیں تلاش کرتا ہوگا؟

کیا آج بھی سرد راہوں سے گُزرتے

وہ شمعٰ کی آگ میں جلتا ہوگا؟

…بس اِتنا جاننا ضروری ہے

…بس اِتنا جاننا ضروری ہے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s