مَرمَریِں

image

چھُوتے ہی اُس ذُلف کی لہراتی

خُوشبو نے لی انگڑائی اور سانسوں

سے برستی گرم مِہک میں دُھلے

…کئی نَو رنگ آنچل

مخمل سی ریت پہ چمکتے تاروں

نے جب چُومے بدن گُلاب کے تب

صندلی شبنم میں رَچی بے شُمار

بُوندوں نے چکھی شرابوں کی

…کئی نو خیز کلیاں

تِشنگی کی بے قابو آرزو بھڑکاتی

رہی اُس آگ کو اور لِپٹی رہی ہونٹوں

سے موم اور بے بسی کے پیراہن

نے پہنے مرمریں لباس جن کی زینت

…سے روشن ہُوۓ کئی نوَ نیاز عاشق

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s