اِلتجاۓ اُلفت

image

گُزارش کرے گُل کہ ابھی

تو برس رہی تھی شبنم کہ

پنکھڑیاں پھر سے مُرجھائی

جاتی ہیں کہ پیاسے ورقوں کو

…ترسانا نہیں اچھّا

کہنے لگا ساحل سمندر سے

کہ کیوں میرے کنارے تَر نہیں

ہوتے جو تُو نذر کرے اِک لہر

سیراب ہو جاۓ میری ویِرانی

ویسے بھی اپنوں کو

…تڑپانا نہیں اچھّا

شِکوہ کرےٹِہنی کہ پھول کیوں

بنا ہے زِینت پراۓ شجر کی ، ویسے

تو حق میرا بھی ہےکیونکہ دیوانوں کو

….ستانا نہیں اچھّا

اِلتجا کرتی ہے سُرخی لبوں سے

کہ ابھی ٹھہرو زرا کہ محبوب

سے مِلنے پر رنگ دینا مُجھے بے شک

ظُلمت میں یہ گُلاب پھیکے ہی سہی

مگر یہ بھی غلط ہے کہ جذبوں کو

…سُلگانا نہیں اچھّا

درخواست کرنے لگی کِرنیں آفتاب

سے کہ آج نہ دھکیل مُجھے اُس اَور

کہ کوئی کاٹ رہا ہے ہِجر کے کڑے

دن ویسے بھی دِلوں کو

…جلانا نہیں اچھّا

 

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s