گُلِ آشنائی

image

گُلاب اوڑھےتو کبھی سِتاروں کی چھاؤں

..آنچل ہی سہی وابستہ تو وہی ہے

نہاۓ چمپئی رَس کے عِطر میں کبھی

..گیسُو ہی سہی وابستہ تو وہی ہے

رات بِسری ہے خوابِیدہ نینوں تلے

..نیند ہی سہی وابستہ تو وہی ہے

بجے اِدھر پایل تو لمس جلے چُوڑی کا

..شرارت ہی سہی وابستہ تو وہی ہے

رَگ رَگ کرے شکوہ لبوں سے جام

..تِشنگی ہی سہی وابستہ تو وہی ہے

شمعٰ کی کسک پہ مُسکراۓ ہے پروانہ

..دِل لگی ہی سہی وابستہ تو وہی ہے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s