..چَند روز اور

IMG_1631

اِشارے تو دیتی ہیں کبھی زرخیز

ڈالیاں اور کبھی مخملی گُلاب کہ

بہار آئی ہے لے کے نۓ افسانے تو

کر لے ارمان پُورے مگر وقت ہے جو

کہتا ہے کہ ابھی رُک جا زرا

…چَند روز اور

چھنکنے میں ابھی پایل کے دن

ٹِھہرےاور اِنتہا ہے صبر کی کہ

اُسے بِکھرنے کی عادَت ہے تو شرمِیلے

پاؤں بھی حُکم مانتے ہیں اُن سُروں کا

جو کہتے ہیں کہ سنبھل جا

…چَند روز اور

اِنتظار میں ہے کنگن کہ سِہہ نہ

پاۓ بِن کھنکے اور رِہ نہ پاۓ بن چھُوۓ

جاؤ ، کہہ دو پِیا سے کہ پیاسی بانہیں

نہ ترسائیں تو کیوں کسمساؤُں

…چَند روز اور

جلُوں بن سَجن تڑپُوں بِنا نظارہ

تو کیوں نہ شِکوہ کریں نین اور

وہ کہے اَشک پِی جا

…چَند روز اور

کیا نہیں ہے آنچل کے رُخ پہ

ستارہ ، افشاں ، یا سنگِ مَرمَر

اور اُس پہ ستم کہ ہِجر کے لَب

یہی دُہائی دیں کہ چھُپ جا

…چَند روز اور

جانم!  کیوں نہ چاہُوں تُمہیں کہ

زرّہ زرّہ گواہ ہے میری ذات کا

تُم سے آشنائی کا پھر بھی درد

کہتا ہے کہ سِہہ جا

…چَند روز اور

خُود کو دیکھا نہیں زمانے ہُوۓ

اور اَب جب آئینہ سامنے ہے تو

عکس کہتا ہے اِنتظار کر

…چَند روز اور

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s