فریب

IMG_1636

ٹُوٹ کے گِرتے ہیں اِحساس سمندر میں

جیسے کوئی لِہر نہ ہُوئی مُحبّت ہُوئی

اُلفت سُناتی ہے قِصّے آزمائشوں کے

جیسے کوئی زندگی نہ ہُوئی کہانی ہوئی

اِس کسک کی چاہ میں فنا ہُوۓ صنم

جیسے کوئی چُبھن نہ ہُوئی راحت ہُوئی

آؤ! پھر کہ بدن کی اور کوئی طلب نہیں

جیسے کوئی ضرورت نہ ہُوئی دُشواری ہوئی

توڑ کے دیکھو کبھی سراب کی ڈالی کو

جیسے کوئی خطا نہ ہوئی منزل ہوئی

جبر کرتے ہیں ذہن میں قید خیال ایسے

جیسے کوئی حقیقت نہ ہُوئی چُغلی ہوئی

شمعٰ اِنتظار میں گھُلی جاتی ہے یُوں

جیسےکوئی  تباہی نہ ہوئی عاشقی ہُوئی

 

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s