رسمِ مُحبّت

IMG_1664

کُچھ پُوچھ بھی لیں اگر تو غم نہ کرنا

یہ ادا ہے مُحبّت کی کوئی شکوہ تو نہیں

ڈُوبتے فاصلوں میں حسرتیں زندہ رہیں

یہ وفا ہے مُحبّت کی کوئی شکوہ تو نہیں

خاموش رہے زُباں ستم سہنے کے باوجود

یہ جزا ہے مُحبّت کی کوئی شکوہ تو نہیں

جواب سے نہ پُوچھ سوال میں چھُپے بھید

یہ رضا ہے مُحبّت کی کوئی شکوہ تو نہیں

یہ لَب یہ نظر اور آرزوؤں میں مانگا ہُوا پل

یہ دُعا ہے مُحبّت کی کوئی شکوہ تو نہیں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s