بُزدِلی

IMG_1588

خُود کو رات میں ڈھلتے جب دیکھُوں

سیاہی اور بھی کالی لگنے لگتی ہے

اندر کا سنّاٹا جب شور مچاتا ہے تو

خاموشی اور بھی بے زُباں لگنے لگتی ہے

آزاد ہونے لگیں جب پَر خواہشوں کے

غُلامی اور بھی تنگ دَست لگنے لگتی ہے

نہ کر سکُوں وعدوں سے وفا داری اگر

بے وفائی اور بھی بے وفا لگنے لگتی ہے

!دَم نہ ہو جب بھی تیری لَو میں اے شمعٰ

یہ مُحبّت اور بھی بے نُور لگنے لگتی ہے

 

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s