سَزا

IMG_1708

خُود کو پِہچان لیا ہے بڑی تگ و دو کے بعد

یہ کرم ہے مُحبّت کا یا پھر خُدا کی مار

اب آئینہ کم دیکھتا ہے وجُود کہ ڈَر لگتا ہے

یہ داغ ہے بدصُورت یا پھر خُدا کی مار

نہ ہِمّت رہی نہ ہی حوصلہ افزائی کے خط مِلے

شاموں پہ گرہن لگ گیا یا پھر خُدا کی مار

گُتر دِیا ہے اُڑتے پَروں کو اپنے ہی ہاتھوں میں نے

اُڑان بے منزل تھی یا پھر خُدا کی مار

خوابوں کو سَچ کرنے چلی تھی خیال کے سہارے

حقیقت نے جگایا ضمیر کو یا پھر خُدا کی مار

ٹُھکرائی جانے والی شمعٰ تو بُجھتی ہی نہیں

انتظار ہے جو لَوٹے گا نہیں یا پھر خُدا کی مار

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s