فاصلے

Sun and Moon

اِدھر سُنائی دیتی رہی صدا تم ہو آس پاس میرے

دوسرے پَل یہ لگا کہ اجنبی بن چُکے ہو تم

اِک اِک لمحے کی مِثال کیا دُوں اے صنم تمہیں

بِصرے پَلوں کے مہماں بن چُکے ہو تم

آج بھی تازہ ہے اُس لمس کی خوُشبو و کسک

یہ سَچ ہے کہ بُہت دُور جا چُکے ہو تم

کہنا یاد سے نہ ستاۓ تُمہیں میری آنکھوں سے

کہ بڑھتے ہُوۓ فاصلوں میں بھی پاس آ چُکے ہو تم

کیوں کر دِیا ہے تنہا مجھے پراۓ شوق میں

مجھے جیتنے کی دُھن میں مات کھا چُکے ہو تم

نہ سمجھنا کہ دل بھُول چُکا ہے دھڑکنا

بس اِسی غلط فہمی پہ چوٹ کھا چُکے ہو تم

اُدھر کا آفتاب یہاں کی چاندنی جُدا ہیں مگر

حد سے آگے دو جہانوں میں سما چُکے ہو تم

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s