آمنے سامنے

IMG_1723

شَب بھر چَرچا رہا تیرے دِیدار کا

کہ چاند کی چاہ میں بیٹھا رہا چوکور

اور ستم گر دیکھتا رہا کہ کب بادل

چھَٹیں  ہِجر کے اور نہ جانے کب

…رُوبرو ہوں محبُوب اور مُحبّت

کبھی چھنکتی تھی جو پایل اُس کے لَمس سے

مَن اب چاہے بھی تو کھنکتی نہیں پاگل

کہ اُن ہاتھوں کے سُر کو یاد کرتی تو

ہے پر اِنتظار میں ہے کسک کہ نہ جانے کب

…رُوبرو ہوں پازیب اور دھڑکن

رات کی رانی میں سانس لیتا ہےاُس کا وجُود

یہ سَچ ہے تبھی تو خواب اور خُوشبو  کا

ساتھ ہے پُرانا پر مُدّت سے بیٹھی ہُوں  اُس

سفر کی تلاش میں کہ نہ جانے کب

…رُوبرو ہوں نیند اور کروٹ

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s