گھاؤ

IMG_1725

چھُپتا سورج اور ٹھنڈا چاند

سب کرتے تھے رقص میری

ہتھیلی پر مگر اب نہ کرنیں

چُومتی ہیں ڈالیاں میری نہ

ہی مہتاب دِکھاتا ہے

…جلوہ اپنا

بے تاب اِنتظار کی تمنّا

اور پیاسی آنکھوں میں

تڑپ جگتی تھی کبھی مگر

اب نہ ہی کوئی دستک ہےنہ

ہی قدموں کی چاپ سُناتی ہے

…قِصّہ اپنا

خُشک آنسُو اور مُرجھاۓ پھول

بھرتے تھے جو زخم کبھی دوا

کے نام پر مگر اب تو نہ ہی

مرہَم لگاتا ہے دل اور نہ

ہی گُلستان سجاتا ہے کوئی

…ہمدرد اپنا

مرچُکا تھا بدن خاک

کے سِینے میں دَب کر

کب سے مگر نہ ہی قرار

پایا اور نہ ہی مِلا

…مسیحہ اپنا

 

 

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s