شوق آزمائی

IMG_1731

اجنبی تھا تھوڑا وہ انجانا بھی تھا

کبھی تھا اپنا تو کبھی بیگانہ بھی تھا

کر نہ پایا جو بے وفائی نامِ وفا پہ

دِلدار نے ایک قرض میرا چُکانا بھی تھا

مِثالِ عشق بنا لا زوالی کے شوق میں

صُوفی بن کے اِس بھِیڑ میں اُسے آنا ہی تھا

جسے پایا اپنے رُوبرو نہ ہو سکا جاویدہ کبھی

طوافِ آرزو کی لَو میں اُسےجَل جانا ہی تھا

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s