روزانہ

7AB6D790-EADD-4146-8597-72B60EDCF074

ہر روز نۓ اِنتظار کی سیِڑھی چڑھتی ہُوں میں

ہر روز گِرتی ہُوں آسمان کی بُلندی سے مات کھا کے

روز نۓ گُلستان میں پھُول سجاتی ہُوں میں

روز مُرجھاتے ہیں گُل کانٹوں کی ذَد میں آکے

روز بہ روز سانسوں میں زندگی بھرتی ہُوں میں

روز بہ روز موت دِکھاتی ہے مُجھے آئینہ مُسکرا کے

روزانہ ایک نئ شفق کی راہ تکتی ہُوں میں

روزانہ ٹھہرتی ہے صُبح پُرانے راستوں پہ آکے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s