خُود سَری

D3633CD9-B406-4B72-B551-0B5104C3717E

کھڑی ہُوں اُس اِنتظار کی

چاہ میں کہ جب دراڑوں میں

اثر ہو گِہرا تب مکاں گِر جاۓ

اور میں  بھی بِکھر جاؤُں۔۔۔

کیوں نہیں ٹُوٹتے موتی اِرادوں

کے کیونکہ نہیں چُور ہوتے

محل خیالوں کے، گر یہ ٹُوٹیں

تو شاید میں بھی ٹُوٹ جاؤُں۔۔۔

کئی پُرانی یادوں کے صفحے

اور چند چمکتے بے باک آنچل

اگر یہ سَرک جائیں سَر سے تو

کہِیں بے پردہ ہی نہ ہو جاؤُں۔۔۔

ابھی بھی نظر آتی ہیں وہ

مست کلیاں تو کبھی سُنتی

ہُوں مدہوش صدائیں

سوچا اِس شہر کو الوداٰع

کہہ دُوں ، گُماں ہے کہِیں اپنے

ہی فِعل سے نہ مُکر جاؤُں۔۔۔

میرے پیروں میں دیکھ یہ زنجیر

کس کی ہے، یہ کھنک کس کی ہے

یہ خاموش نہیں ہوتی ، بُلاتی  ہے

تُمہیں ، گر یہ سو جاۓ کبھی تو

شاید میں بھی سو جاؤُں۔۔۔

شِدّت سے کی  ہےجس کی پرستش

اُس خُدا سے پُوچھا تھا کبھی قِبلے

کا رُخ میں نے، گر اب کرے وِرد دل

اُس کی تسبیح کا، کہِیں سجدے

میں ہی نہ مر جاؤُں۔۔۔

 

 

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s