زَرد چمک

FF97262D-DE3F-4365-8B9A-61657F38185E

ہُوئی تھی رات ابھی ابھی آدھی جواں

کہ چاندنی نے نِہلانا شُروع کر دیا

تھے چشم تَر حسرتوں کی لَو میں

کہ آہٹوں نے دھڑکانا شُروع کر دیا

سو گۓ تھے خواب الودعٰ کہتے ہی جو

کہ خواہشوں نےاُکسانا شروع کر دیا

چمن پُر رنگ تھا کانٹوں کی قطاروں سے

کہ گُلشنِ بدن کو مہکانا شروع کر دیا

زخم جو بھرا تھا زہرِ صبر پِیتے ہی

کہ قاتل نے دوبارہ آزماناشروع کر دیا

سوچتی رہ گئی کہ شمع کہاں گُم ہُوئی

کہ پتنگے نے پھرچکّر لگانا شروع کر دیا

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s