زِلّت

4D50BFE8-DCCE-42C6-9224-76500C02016D

رات گۓ تک وہ میرے سرہانےبیٹھا رہا

شاید اِنتظار تھا اُسے اِک نئی کہانی کا

اور میں لیٹی رہی چُپ چاپ تَکتے اُسے

کہ کہیِں چھِن نہ جائیں پَل آنکھ لگتے ہی

کبھی اُس کے لمحے میرے چاند کا پتا پُوچھتے

کبھی سِتاروں پہ ٹھہرتا اُس کا قافلہ دیکھا

وہ کیا جانے کافر اُجڑے دِنوں کا حاصل

میرے خلوص کی کیا قیمت ادا کی تُو نے ظالم

ایک دل ہی تھا جو تُجھے سونپ کے چل دی

اُسے بھی تُو نے اپنے خوابوں کا مدعویٰ سمجھا

یہ پِگھلتےدل ہی تھے جن کو سمجھا تُو نےکھِلونا

میں شمعٰ جلاتی رہی اپنی ذات کو مِٹا کر بے مُروّت

 

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s